The wedding took place on the same day دوبھائیوں کی شادی ایک ہی دن ہوئی

The wedding took place on the same day
People of Kufa, together with great Dhoom Dhamam, married all of their friends in the invitation of Williamsa, all the honorary priests in the invitation of Masoodaban Kamaam, Hasan ibn Salih, Sufyan Thori, Imam Azam. People were eating and sitting in the house because suddenly the family fled from the house of evil. She said, “There is a lot of difference between the women and the women who have spent their night in the night,” said Saffeer Sauri. It was said that during the period of Amir Mu’awiyah, there was no difference in marriage. Click below to know how to get rid of it

The Imam said, “What is your opinion, Imam Sahib?” Imam Sahib said, “The first two boys will be called,” he said. Both the husbands were summoned, both of them asked separately from both of them that night The woman with whom the night is spent, if she is in your marriage, do you like? Both said: Yes! Then Imam Sahib said: “You both divorce your wives, whom your marriage was read, and let each person marry him with whom we are in bed.” (Arafat al-mu’minin ص: 255) The answer that Saffan Thuri had answered was also correct in terms of the problem, the marriage does not invalidate marriage due to the fact, but the Imam’s viewpoint is mentioned in the part It was because, because Vital had to wait until the time, which was a difficult task at the time, then each of the time of the day of Judgment would be considered that my wife had passed away with the other person, The purpose of the marriage and the marriage of the marriage is that the unity, unity, will be established with great difficulty.

دوبھائیوں کی شادی ایک ہی دن ہوئی


کوفہ کے ایک شخص نے بڑے دھوم دھام سے ایک ساتھ اپنے دوبیٹوں کی شادی کی ولیمہ کی دعوت میں تمام اعیان واکابرموجودتھے مسعربن کدام، حسن بن صالح، سفیان ثوری، امام اعظم بھی شریک دعوت تھے لوگ بیٹھے کھانا کھا رہےتھےکہ اچانک صاحب خانہ بدحواس گھرسے نکلااو کہا غضب ہوگیا زفاف کی رات عورتوں کی غلطی سے بیویاں بدل گئی جس عورت نے جس کے پاس رات گزاری وہ اس کا شوہرنہیں تھا سفیان ثوری نے کہا امیر معاویہ کے زمانے میں ایسا واقعہ پیش آیا تھا، اس سے نکاح پرکچھ فرق نہیں پڑتا ہےالبتہ دونوں کو مہرلازم ہوگ مکمل جاننےکےلیے نیچے کلک کریں

مسعر بن کدام،امام صاحب کی طرف متوجہ ہوئے کہ آپ کی کیا رائے ہے، امام صاحب نے فرمایا پہلے دونوں لڑکے کو بلایا جائے تب جواب دوں گا، دونوں شوہر کو بلایا گیا اما م صاحب نے دونوں سے الگ الگ پوچھا کہ رات تم نے جس عورت کے ساتھ رات گزاری ہے، اگر وہی تمہارے نکاح میں رہے کیا تمہیں پسندہے ؟دونوں نے کہا: ہاں! تب امام صاحب نے فرمایا: تم دونوں اپنی بیویوں کو جن سے تمہارا نکاح پڑھایا گیا تھااسے طلاق دے دو اورہر شخص اس سے نکاح کر لے جو اس کے ساتھ ہم بستر رہ چکی ہے۔ (عقود الجمان ص:۲۵۵)حضرت سفیان ثوری نے جو جواب دیا تھا مسئلہ کے لحاظ سے وہ بھی صحیح تھا،وطی بالشبہ کی وجہ سے نکاح نہیں ٹوٹتا ہے؛ مگر امام صاحب نے جس مصلحت کو پیش نظر رکھا، وہ ان ہی کا حصہ تھا؛ اس لیے کہ وطی بالشبہ کی وجہ سے عدت تک انتظار کرنا پڑتا جو اس وقت ایک مشکل امر تھا پھر عدت کے زمانے ہر ایک کو یہ خیال گزرتا کہ میری بیوی دوسرے کے پاس رات گزار چکی ہے، اور اس کے ساتھ رہنے پر غیرت گوارہ نہ کرتی اور نکاح کا اصل مقصد الفت ومحبت، اتحاد واعتماد بڑی مشکل سے قائم ہوپاتا ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *